پیکرجمیلﷺ

₨1,200.00
(No reviews yet) Write a Review
SKU:
BC-007

’’بیٹا پتھر اُٹھا کر لاتا جاتا اور باپ نصب کرتا جاتا ، بنیادیں بھر گئیں تو دیواروں کا مرحلہ آپہنچا۔ دیواریں لمحہ لمحہ تکمیل کی جانب رواں تھیں کہ باپ نے تھکاوٹ محسوس کی۔ چند لمحوں کے توقف کے بعد باپ اور بیٹے دونوں کے ہاتھ بلند ہوئے اور یہ دُعا دل کی گہرائیوں سے نکل کر فضا کو چیرنے لگی‘‘ (پیکر جمیل ، ص51)

’’نیلے آسمان کو رات کی سیاہی نے تاریک بنا رکھا تھا مگر ننھے منّے تارے چمک چمک کر اس تاریکی کو اجالے میں بدلنے کی ناکام سعی کر رہے تھے۔ ان تاروں سے بہت دور مکہ کے ایک مکان میں آمنہ بی بی ،ایک نہایت خوب صورت اور گول مٹول بچے کو چھاتی سے لگائے ماضی کے دریچوں میں جھانک رہی تھیں‘‘ (پیکر جمیل ، ص52)

’’رات کی سیاہ اور دراز زلفیں اپنے دامن کو سمیٹ رہی تھیں اور صبح کا اُجالا رفتہ رفتہ اپنے پر پھیلا رہا تھا کہ کوہ صفا سے آوازہ بلند ہوا ، ہائے صبح کا خطرہ ، ہائے صبح کا خطرہ۔ (پیکر جمیل ، ص75)

افتخار عارف لکھتے ہیں:

صاحب نصیب ہیں محمد حمید شاہد کہ اللہ کریم نے انہیں توفیق عطا فرمائی کہ وہ سرور دو عالم نبی آخر الزماں احمد مجتبیٰ ﷺ کی سیرت طیبہ کو قلم بند کرنے کا شرف اور سعادت حاصل کریں۔ اُردو، اسلامی دُنیا کی زبانوں میں سب سے کم عمر زبان ہے مگر اس کا اعزاز ہے کہ قرآن حکیم کے تراجم و تفسیر اور سیرت طیبہ پر جتنا اور جیسا معیاری کام ہوا ہے اور ہو رہا ہے وہ کسی دوسری زبان سے کم نہیں ہے۔ ’’پیکر جمیل‘‘ محمد حمید شاہد کی پہلی کتاب ہے مگر اپنے معیار و نگارش و مواد کے اعتبار سے کتب سیرت میں ایک لائق اعتبار و استناد حوالے کی حیثیت رکھتی ہے۔ سادہ، رواں اندازِ بیان اور نیاز و اخلاص کے پیرائے میں ڈوبا ہوا اسلوب قاری کو اپنی جانب منہمک اور متوجہ رکھتا ہے۔ خیر سے اس کتاب کی اشاعت کو کئی برس گزر چکے ہیں اور اب جبکہ وہ افسانوں اور تنقیدی کتابیوں کے مصنف کے طور پر ساری دُنیا میں جانے پہچانے جاتے ہیں اور حال ہی میں ان کی خدمات کے اعتراف میں ان کو یومِ پاکستان کے موقع پر قومی اعزاز سے بھی نوازا گیا، ’’پیکر جمیل‘‘ کا نیا ایڈیشن شائع ہو رہا ہے۔ یقین کیا جانا چاہیے کہ ان کی یہ خدمت دُنیا و آخرت میں ان کی سربلندی اور سرفرازی کی ضامن ہو گی۔